بیٹی نے باپ کے لئے اپنے جسم کا اعضاء عطیہ کر دیا

بیٹی نے باپ کے لئے اپنے جسم کا اعضاء عطیہ کر دیا
یاض ۔ سعودی عرب میں24 سالہ بیٹی ولاء اسماعیل عاشور الصائغ نے اپنے والد کو بتائے بغیرگردے کا عطیہ دے کر مسلسل 3 سالہ تکلیف سے نجات دلادی۔ سعودی نشریاتی ادارے کے مطابق بیٹی کی جانب سے باپ کی خوشی کی خاطر قربانی کا یہ انوکھا انداز ہے کہ بیٹی نے تین برس سے اپنے والد کو گردے کی تکلیف میں تڑپتا ہوا دیکھ کر اپنامگردہ عطیہ کردیا۔
بیٹی نے میڈیا کو بتایا کہ اس کے والد گردے کی صفائی کیلئے جاتے تو ان کے جسم میں لگائے جانے والے پائپ دیکھ کر مجھے بہت زیادہ دکھ ہوتا تھا۔ کئی بار میں نے انہیں گردے کا عطیہ قبول کرنے پر راضی کرنے کی کوشش کی تاہم انہوں نے انکار کر دیا۔ حالیہ ایام میں وہ ہفتے میں 3 بار گردے کی صفائی پر مجبور ہوئے۔ ولاء اسماعیل نے کہا کہ میں نے اپنے طور پر ہسپتال والوں سے گردے کے عطیے کاکہا۔
تو انہوں نے میرے مختلف ٹیسٹ لئے اور خاموشی سے مجھے یہ بتا دیا کہ تمہارا گردہ تمہارے والد کے لئے میچ کررہا ہے۔ والدہ اور خالہ سے اس کا تذکرہ کیا۔ دونوں نے میرے والد کو یہ کہہ کر کہ آپ کو رضاکارانہ طورپر گردہ دینے کیلئے ایک صاحبہ تیار ہیں پیوند کاری سے آپ مسلسل تکلیف سے بچ جائیں گے۔انہوں نے بتایا کہ 7گھنٹے طویل آپریشن کے بعد گردے کی ٹرانسپلانٹیشن مکمل ہوگئی ہے جس پر وہ خوش ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں