ترقیاتی کام کرنے والے ٹھیکدار نے چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کو ڈیم بنانے کی بڑی پیشکش کردی

اسلام آباد (نیوز ڈیسک ) ترقیاتی کام کرنے والے ٹھیکدار نے چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کو ڈیم بنانے کی پیشکش کی ہے۔پیشکش کرنے والے ٹھیکدار کا کہنا ہے کہ میں اصل لاگت سے 25فیصد کم خرچ پر بناؤں گا۔ٹھیکدار کا کہنا ہے کہ جو ڈیم مجھ سے بنوانا ہے اس کی دستاویزات دیں۔
چیف جسٹس نے ٹھیکدار کو ہدایت کی کہ حساب کتاب لگا کر تحریری طور پر آگاہ کریں۔چیف جسٹس کا کہنا ہے کہ ترقیاتی فنڈ کمیٹی کے ذریعے سے خرچ ہوں گے۔تمام ممبران سے بات کر کے کل کمیٹی کا اعلان کریں گے۔جب کہ ایک کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے ڈیم فنڈ پر تنقید کرنے والوں کو کرارا جواب دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ اپنی مدد آپ کے تحت کام کرنا بھیک مانگنا نہیں ہے۔قومی جذبے کے تحت کام شروع کیا کم ظرف لوگ جھوٹے الزام لگا رہے ہیں۔ مخالفین کو اور کچھ نہیں ملا تو ڈیم کی تعمیر پر مخالفت شروع کر دی۔اس طرح کے الزام لگانے والوں کو شرم آنی چاہیئے۔
یاد رہے سب سے پہلے چیف جسٹس نے ہی ڈیموں کے لیے فنڈ اکھٹا کرنے کا اعلان کیا تھا اور کہا تھا کہ اب جو بھی ہو پاکستان میں ڈیم بن کر رہے گا۔جس کے بعد سرکاری و غیر سرکاری اداروں نے بھی ڈیم کی تعمیر کے لیے فنڈ دینے میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔پاک فوج بھی میدان میں آئی اور گذشتہ روز آرمی چیف نے چیف جسٹس سے ملاقات کی ہے اور انہیں ڈیمز فنڈز کے لئے ایک ارب 59 لاکھ روپے کا چیک پیش کیا۔اور کہا کہ پاک فوج قومی تعمیر و ترقی میں بطور ادارہ اپنا کردار ادا کرتی رہے گی۔
اس کے علاوہ وزیراعظم عمران خان نے بھی بیرون ملک پاکستانیوں سے ڈیم فنڈ میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے کی اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکا اور یورپ میں مقیم ہر پاکستانی ایک ہزار ڈالر یا اس سے زائد رقم بھیجیں۔نہوں نے چیف جسٹس کی جانب سے فنڈ ریزنگ کے اقدام کو سراہتے ہوئے کہا کہ چیف جسٹس کو داد دیتا ہوں کہ انہوں نے یہ قدم اٹھایا ۔ یہ مسئلہ ان کا نہیں سیاسی رہنماؤں کا حل کرنے کا تھا اب تک چیف جسٹس کے فنڈ میں180 کروڑ روپے اکٹھے ہو چکے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ بیرون ملک پاکستانیوں سے خصوصی مخاطب ہوں کہ وہ کم از کم ایک ہزار ڈالر یا اس سے زائد رقم دیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں